یہ اپنا وطن ہے اپنی شان – جویریہ بتول

(✍🏻:جویریہ بتول)…
یہ اپنا وطن ہے اپنی شان…
نظریہ اِس کا ہے اپنا ایمان…!

کیا تھا عہد جب آسماں تلے…
قافلے وفا کے پھر یوں چلے…
قدموں سے ایسے قدم وہ ملے…
روک نہ سکا جنہیں کوئی طوفان…

وہ جو خواب تھا اقبال کا…
تھا جواب وہ ہر اِک سوال کا…
تھا عزم وہ خاتمۂ زوال کا…
رفعتوں کے سفر کا ہوا تھا اعلان…

کی قائد نے یوں نظریہ کی وضاحت…
کہ دنگ کھڑی تھی ہر ایک فصاحت…
ہار گئی تھی جب ہر سُو شقاوت…
منہ دیکھتا رہا، عدو ہو کر حیران…

دامن میں پھر لُہو کے دریا بَھرے…
سروں پہ بہنوں کی ردائیں اوڑھے…
وہ بچے، عورتیں اور جواں و بوڑھے…
بن گئے سب طُلوعِ سَحَر کی اذان…

اِک عہد جو کیا تھا ،وفا ہو گیا…
بچے بچے کی زباں پہ صدا ہو گیا…
نغمۂ آزادی کی پھر جو نَوا ہو گیا…
جہاں میں بن گئی اپنی یہ پہچان…

یہ دھرتی ہی نہیں ایک عقیدہ تھا…
حقیقت کا کُھلا جو جریدہ تھا…
مقابل جس کے باطِل سَر بریدہ تھا…
تھاصدیوں کاسینے میں مچلتا ارمان…

آج بھی ہے ضرورت اُسی اتحاد کی…
ترقئ علوم و فنون اور ایجاد کی…
کردارِ انسانیت کی پختہ بنیاد کی…
خزاں کی زَد میں ہو نہ کبھی گُلستان…

یہ اپنا وطن ہے اپنی شان…
نظریہ اس کا ہے اپنا ایمان…!

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

ہاتھ کمزور ہیں الحاد سے دل خوگر ہیں – قسط 2 – کاشف علی ہاشمی

ہاتھ بے زور ہیں الحاد سے دل خوگر ہیں تحریر کاشف علی ہاشمی قسط نمبر …

سعادت ماہ رمضان – عظمیٰ ربانی

🌹🌹سعادت ماہ رمضان 🌹 ازقلم 🖊️عظمی ربانی رحمتوں کا مہینہ رمضان آگیا بن کے یہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے