وطن کے محافظ – جویریہ بتول

چمن کے محافظ…!!!
✍🏻:جویریہ بتول

فضاؤں کا سینہ چیر کر…
ہواؤں کے رُخ پھیر کر…
تند و تیز سی لہروں پر…
سرحدوں کے پہروں پر…
بھرو اُڑان تم تیر کی طرح…
وفا سے اُٹھے خمیر کی طرح…
اک گہرے سے یقیں کی طرح…
جھپٹتے ہو شاہیں کی طرح…
جو سرحدوں کے رکھوالے…
یہ جواں ہیں بڑے دل والے…
ہستی سے بڑھ کر رکھتے ہیں…
دھرتی یہ جس پر مرتے ہیں…
زیست کے یہ چراغ بجھا کر…
دل کے سب ارمان مٹا کر…
راہوں کو روشن رکھتے ہیں…
لہو سے دیے جب جلتے ہیں…
وفا پہ ہو جاتے قربان ہیں…
جن کی بدولت اس چمن میں…
اٹھکیلیاں کرتے امن و امان ہیں…
اللّٰہ اکبر کی گونجوں میں…
ہدف پر جب جھپٹے ہیں…
یہ شہید ہوں یا غازی…
جس حال میں بھی پلٹتے ہیں…
ہر دو صورت عظیم ہیں یہ…
نشانِ عزمِ صمیم ہیں یہ…
قوم کے لیے اعزاز و وقار ہیں…
سب کے لیے حُسنِ گفتار ہیں…
مشکل میں راحت کی نوید یہ…
عدو پہ ہیں کڑکتی وعید یہ…!!

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

امر جلیل اور بعض دیگر معتذرین کے باطل نظریات اور راہ حق – جویریہ بتول

امر جلیل اور بعض دیگر معتذرین کے باطل نظریات اور راہ حق جویریہ بتول اللّٰہ …

یہ اپنا وطن ہے اپنی شان – جویریہ بتول

(✍🏻:جویریہ بتول)… یہ اپنا وطن ہے اپنی شان… نظریہ اِس کا ہے اپنا ایمان…! کیا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے